بیٹی bt Rooh_e_bashar

میں شادی کسی صورت نہیں کروں گی میں اماں اپ جیسی زندگی نہیں گزرنا چاہتی یہ کہتے ہوئے وہ آنسوں کے ساتھ رو پڑی میں نہیں چاہتی اماں کے جیسے ابا کے ساتھ اپنے نے زندگی گزاری میں بھی گزاروں میں اپنے پاؤں پر کھڑا ہونا چاہتی ہوں میں نہیں چاہتی کل کو مجھے بھی ساس سسر کے طعنہ سننے پڑے یہ کے غریب گھر کی لڑکی ہے تو دب جائے گی اور یہاں آپ کو بتاؤ کے سسرال میں میری زندگی اک جہنمی کی طرح ہے بات بات پے طعنہ ملتا ہے کہ باپ کے گھر سے کیا لائی ہو؟ ہر چیز پوچھ کر استعمال کرو یہ نہ کرو وہ کرو تو آپ کی وہی middle class ماؤں والی نصیحت کہ "بیٹا صبر کر جاؤ سب ٹھیک ہو جائے گا ابھی نئی نئی شادی ہے تم وہاں جگہ بناؤ " یہ بھی کر لیا مان لی آپ کی بات مگر کچھ نہ بدلہ پھر آپ کو آ کر بتایا کہ اماں وہ اچھے لوگ نہیں گالیاں بھی دیتے شوہر بھی اپنی ماں کو نہیں کچھ کہتا نہ روکتا کہ ماں اپنی پسند کی بہو لائی ہو تو تُو پھر وہی بات کہ "بیٹا جب بچے ہو جائیں گے سب ٹھیک ہو جائے گا " تب بھی میں تیری بات مان لی لیکن سسرالیوں میں کوئی بدلاو نہیں آیا شوہر صبح کمانے جاتا رات کو آتا اسے کیا کہو وہ کہتا گھر میں اؤ سکون نہیں ملتا ساس بہو کی چک چک ہوتی ہے بچو سے ملو یا ماں سے ؟ یا بیوی کے دکھڑے سنو؟ میں تو اس کی بیوی ہوں اسکو سکون دو یا اس کی ماں کے خلاف بھڑکاوں؟ یا اسے اس بات کا یقین دلاؤں کے اس کی ماں کا رویہ کیسا ہے میرے ساتھ؟ یا میرے بچو ساتھ؟یہاں بھی میں خاموش تجھے بتاؤ تو وہی نصیحت “بیٹا جب بچے بڑھے ہو جائیں گے تب سب سہی ہو جائے گا”
پر اماں تجھے پتا اگر تب بھی سب سہی نہ ہوا
“تو کم از کم میرے مرنے پر تو ہو ہی جائے گا”
کیونکہ اماں
بیٹا تھوڑی نہ بیٹی ہوں !!!
قربانی مانگتی نہیں دیتی ہوں #general

5 Likes