یا اللہ ان درندوں کو برباد کر دے ۔یہ ناسور ہیں اس معاشرے کا۔

یا اللہ ان درندوں کو برباد کر دے ۔یہ ناسور ہیں اس معاشرے کا۔۔
وطن عزیز میں ایک چار سالہ معصوم بچی کو ماں سمیت
دن تک اجتماعی وحشت کا نشانہ بنایا گیا جب پولیس پہنچی تو بچی نے شلوار نیچے کرتے کہا دیکھیں پولیس انکل ان لوگوں نے میرے ساتھ کیا، کیا ہے

یہ واقعہ کشمور کا ہے… کراچی سے اغوا کی گئی ماں تبسم بیٹی علیشا کو تین دن تک ماں سمیت بچی کو بھی وحشت کا نشانہ بنانے بعد درندوں نے اس شرط پر ماں کو رہا کیا کہ دوسری لڑکی لے آؤ اپنی بچی لے جاؤ… تبسم پولیس کے پاس پہنچی تو ملزمان کو جھانسہ دیکر پکڑنے کے لئے لڑکی کی ضرورت پڑی… اے ایس آئی محمد بخش نے مدد کے لئے اپنی بیٹی پیش کرتے ہوئے اسے ملزمان سے بات کروائی اور ملزمان تک پہنچے، مرکزی ملزم رفیق ملک گرفتار ہوا… پولیس کا یہ اے ایس آء ہیرو وطن عزیز میں کنول کے پھول کے مانند ہے اس کے عظیم کردار کو سلام… ملزم رفیق نے اپنے جرم کا اعتراف بھی کرلیا ہے جو ریمانڈ پر پولیس کسٹڈی میں ہے اور اس کے مجرم ساتھیوں کی تلاش جاری ہے۔ اب اسی وطن عزیز کے فیوڈل لارڈ پیپلز پارٹی کا مقامی ایم این اے احسان رحمان مزاری پولیس پر دباؤ ڈال رہے تاکہ کیس میں زینب الرٹ بل کی دفعات شامل نہ ہوسکے اور کیس کمزور رہے … ڈیپ اسٹیٹ کے پالے ہوئے ایسے درندے ہی ملکی نظام کا ریپ کرتے اور اپنے کارندوں سے شہریوں کے ریپ کرواتے ہیں۔ سندھ حکومت اور پیپلز پارٹی کی اعلی قیادت کو نوٹس لیکر واقعے کے ملزموں سمیت اس کمینے غیر جمہوری سوچ رکھنے والے کشمور ڈسٹرک میں اپنی فاشسٹ ریاست بنائے ہوئے ایم این اے احسان رحمان مزاری کے خلاف بھی کاروائی کرکے اس معصوم بچی اور ماں

کو انصاف دلائیں…ورنہ ایک عدالت اللہ تعالی کی ہے اور وہاں عین انصاف کیا جائے گا ۔

1 Like